مُذاکرہ

مہمان


مصنف موضوع: جو بادشاہ، پُرسِشِ حالِ گدا کرے۔ جوش ملیح آبادی  (پڑھا گیا 54 بار)

نبیل اکبر

  • Moderator
  • Newbie
  • *****
  • تحریریں: 20
  • Karma: +1/-0

جو بادشاہ، پُرسِشِ حالِ گدا کرے
اُس پر کبھی زوال نہ آئے خُدا کرے

حاصِل اگر ہو وحدَتِ نَوعِ بَشر کا عِلم
تو پِھر عَدُوئے جاں سے بھی اِنساں وَفا کرے

میرا بُرا جو چاہ رہا ہے، بہر نَفَس
اللہ ہر لِحاظ سے، اُس کا بَھلا کرے

ہم ساکنانِ کُوئے خرابات کی طرح
یارب! کبھی فقِیہ بھی ترکِ رِیا کرے

احسانِ رفتگاں کہ جو ہے آدمی پہ قرض
فرضِ نِژادِ نَو ہے کہ وہ قرض ادا کرے

کیا تم بھی سُن رہے ہو، یہ آواز، اہلِ شہر
"بابا کوئی غریب کی حاجت رَوا کرے"

زاہد مِری دُعا ہے کہ، مِیرِ فلاحِ عام
مقصُودِ بندَگی سے تجھے آشنا کرے

مائل نہ ہوسکیں گے کبھی ہم فریب پر
کہہ دو، زمانہ، ہم سے مُسَلسَل دغا کرے

اُس کے دلِ کُشادہ پہ قُربان کائنات
جو، دشمنوں کے حق میں بھی، یارو، دُعا کرے

کاش! اہلِ دلق پر بھی بطورِ ذکاتِ حُسن
تکلِیفِ یک نِگاہ، وہ زرِّیں قبا کرے

اِک فرد بھی رہے نہ تہِ چرخ دردمند
اے جوؔش ! وہ زمانہ بھی آئے خُدا کرے